Tuesday, August 16, 2011

چھنو آنٹی کا کلب بلاگستان

بلاگستان کو جنگستان بنانے والی آنکھوں میں نشہ لئَے چھنو آنٹی کا ذکر تو بہت ہوچکا اب زرا انکے قلبی تعلق والے کلب کا بھی ذکر ہو ہی جائے   بلاگستان پہلے امن کا گہوارہ تھا ایک دن اس بلاگستانی محلے میں ایک خارش زدہ کتا داخل ہوا اس کا کام ہر وقت بھونکنا تھا بلاگستان کا ہر بلاگی اس کو دھتکارتا تھا مگر چھنو آنٹی اس کو بہت پسند کرتی تھی ہر طرف کی دھتکار سے       تنگ آکر اس نے چھنو آنٹی کے قدموں میں پناہ لی آنٹی کو ایک ہمراز غمگسار مل گیا ، کتا جب بھونک کے تھک  جاتا تو چھنو آنٹی کے قدموں میں جا بیٹھتا اور قدموں میں سر رکھ کر سارے شکوے کہہ سناتا کہ کس نے اس پر کیا ستم   ڈھائے، چھنو آنٹی اس زبان کی ماہر تھی سب کچھ سن کے تسلی دیتے ہوئے کہتی فکر نہ کر پیارے جب تک میں ہوں                                        پنی ہر بلاگ پوسٹ تجھ پہ وار دوں گی پھر پیار سے اس کی ٹیڑھی دُم کو جھٹکا دیتی بلکل اس طرح جیسے لکڑی کی کاٹھی والے گھوڑے پہ ہتھوڑا مارا جاتا تھا تو وہ دُم دبا کے بھاگتا تھا لیکن یہ بلاگی کتا مالکن کے پیار سے شرما کے  مالکن کے قدموں میں منہ چھپا لیتا اور سوچتا اس ظلمی بلاگستان میں کوئی تو ہے جو میرا اپنا ہے مالکن کا دستِ شفقت                                           اس لاغر کو ایک نئی توانائی بخشتا تھا کتا اپنے مالک کے لیئے وفادار لیکن پاکبازوں کے لیئے نجس ہے اس لیئے اے               ایمان والو ! کتے کا سوچ کے 313  مرتبہ لاحول پڑھ کے پھونک مارا کرو غیبی پھونک ضرور اثر کرے گی اس لیئے  کہ کتا جس پارٹی سے تعلق رکھتا ہے اس کا مالک بھی نظر نہیں آتا مگر اس کی باتیں کتوں پر اثر کرتی ہیں کتے کو ذلیل و خوار کرنے کی ترکیبوں پہ باقی باتیں پھر ہوں گی اس وقت لاحول پڑھتے ہی کتا مالکن کے پاس چلا گیا ہے اس                                                                                                          پوسٹ کی شکایت لگانے رب راکھا ۔۔۔                                                               

5 comments:

مطلوب said...

السلام اعلیکم
آپ کس کتے کی بات کررہے ہیں؟
میں چونکہ اس میدان میں بالکل نیا ہوں تو اس لیے آپ کی بات سمجھ نہیں سکا۔

Zero G said...

سر مزا تو بہت آ رھا ہے آپ کا بلاگ پڑھتے ہوءے پر آپ سے بنتی کرتا ہوں کہ ان کو معا فی دے دی جائے
:)کہ آخر کو یہ میرے شہر بےوفا سے تعلق رکھتے ہیں

یاسر جخوامخواہ جاپانی said...

مولبی ساب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کی بیستی خراب کرنے سے کچھ نہیں ہو گا۔
بعض لوگ اول فول بکنا حق سمجھتے ہیں اور
عزت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چڑیا گھر کی نسل کو عزت بیستی کیا لینا

Dr Jawwad Khan said...

ارے جناب !!!
آج کل کینیڈا کے کافی شاپ میں لگائی گئی ڈیٹ کا بڑا چرچا ہے . جناب کہیں اس ڈیٹ کو دل پر تو نہیں لے گئے ؟؟ ہاہاہاہاہاہاہا

منیر عباسی said...

تو کیا لگ گئی شکایت؟

آپ چنگاریوں کو ہوا دینے والا کام کب سے کرنے لگ پڑے حضور؟